چینی سائنسدانوں نے پھول سے خوبصورت ہیرا بنا لیا

12

بیجنگ (این این آئی) چینی سائنسدانوں نے دعوی کیا ہے کہ انہوں نے مخصوص پھول کی مدد سے دنیا کا پہلا مصنوعی ہیرا تیار کرلیا ہے۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق مصنوعی ہیروں میں مہارت رکھنے والی کمپنی کی جانب سے گزشتہ روز ہینان صوبے کے شہر لیونگ یانگ میں اس ہیرے خوبصورت کی نقاب کشائی کی گئی۔غیرملکی خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق یہ دنیا کا پہلا مصنوعی ہیرا ہے جو پیونی پھول سے حاصل ہونے والے کاربن عناصر سے بنایا گیا ہے۔

چین میں مصنوعی ہیرے کی تیاری میں مہارت رکھنے والی لویانگ ٹائم پرومس کمپنی کو اس ہیرے کی تیاری کے لیے لویانگ نیشنل پیونی گارڈن نے یہ پیونی پھول گزشتہ ماہ فراہم کیے جس میں 50 سال پرانے پھول بھی شامل تھے۔3قیراط کا یہ ہیرا لوئیانگ کے نیشنل فلاور گارڈن کے سرخ پیونی سے حاصل کیا گیا تھا اور اسے لوئیانگ نیشنل پیونی گارڈن کو عطیہ کردیا گیا ہے۔

چینی سائنسدانوں کا کہنا تھاکہ کاربن مختلف عناصر سے حاصل کیا جا سکتا ہے جس میں بال، ہڈیاں اور یہاں تک کہ پھول بھی شامل ہیں۔ان عناصر کو مخصوص ڈیوائس میں ڈالا جاتا ہے جہاں ان کے درمیان موجود کیمیکل بانڈنگ ٹوٹ جاتی ہے پھر ان عناصر کو ہیرے کے ڈھانچے میں ڈھالا جاتا ہے بعد ازاں ہائیڈرو کاربن کو ایک طاقتور ری ایکٹر میں ڈال کر زیادہ گرمی اور دبا ڈالا جاتا ہے، اس طرح وہ عناصر ہیرے میں تبدیل ہوجاتے ہیں۔

یاد رہے کہ پیونی ایک خوبصورت پھول ہے جو کسی حد تک گلاب کے پھول سے مشابہت رکھتا ہے اسی وجہ سے اسے گلاب کا متبادل بھی کہا جاتا ہے، اس پھول کو چین اور جاپان میں ایک خاص اہمیت حاصل ہے۔دیگر سرخ پھولوں کی طرح پیونی بھی محبت کی نمائندگی کرتا ہے جبکہ چینی ثقافت میں، سرخ رنگ خوشی اور قسمت کی علامت سمجھا جاتا ہے یہی وجہ ہے چین کے سائنسدانوں نے اس پھول کو خشک کرکے اس کے کاربن سے یہ شاہکار تخلیق کیا ہے۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published.