سی پیک 2022،چینی سبز سرمایہ کاری میں اضافہ، پاکستان 2030 تک 30 فیصد قابل تجدید توانائی حاصل کرے گا

15

اسلام آباد(این این آئی) سی پیک نے رواں سال پاکستان کے سبز توانائی کے منظر نامے میں متعدد موقع کے ساتھ فروغ پا یا جو 2030 تک قابل تجدید توانائی سے 30 فیصد تک اپنی بجلی پید کرنے کے حصہ کو بڑھانے کے ملک کے منصوبے کی بنیاد رکھتا ہے،گوادر پرو کے مطابق اختتامی سال کے دوران چین پاکستان سبز توانائی نے سی پیک توانائی کے مکس کی رفتار کو دائمی طور پر

حاصل کرنے میں مدد کی ہے اور ہائیڈرو، ونڈ، سولر اور دیگر شعبوں اور مستقبل کے منصوبے پاکستان کے ماحولیاتی نقطہ نظر کو تبدیل کر دیں گے۔ 2022 میں پاک چین نئی گرین کوریڈور کا اعلان کیا گیا، دونوں ممالک کے درمیان گرین بجلی کا بانڈ پاکستان کو اس کے موسمیاتی اہداف اور اقوام متحدہ کے پائیدار ترقی کے اہداف کو پورا کرنے میں بھی مدد فراہم کرے گا۔ گوادر پرو کے مطابق جب دنیا بھر میں قابل تجدید توانائی کا چرچا ہے، چین کا بیلٹ اینڈ روڈ انیشیٹو سبز انقلاب میں اپنا حصہ ڈالنے میں پیچھے نہیں ہے۔ اسی طرح چین کی جانب سے سی پیک توانائی کی سرمایہ کاری اب سبز توانائی پر توجہ مرکوز کر رہی ہے۔ اگر ہم یہ کہیں تو مبالغہ آرائی نہیں ہو گی کہ 2022 قابل تجدید توانائی میں پاک چین تعاون میں ایک نیا دور لے کر آیا، کیونکہ ہم نے دونوں دوست ممالک کے درمیان سبز توانائی کے شعبے میں انتہائی حوصلہ افزا آثار دیکھے ہیں۔ گوادر پرو کے مطابق اب تک، قابل تجدید توانائی کے ذرائع پاکستان کے مجموعی بجلی پیدا کرنے والے مرکب کا ایک بہت ہی معمولی حصہ ہیں۔ نیشنل الیکٹرک پاور ریگولیٹری اتھارٹی کی ایک حالیہ رپورٹ کے مطابق ہوا اور شمسی توانائی کے لیے نصب شدہ صلاحیت بالترتیب 43,775 میگاواٹ میں سے تقریباً 4.2 فی صد (1,831 میگاواٹ) اور 1.4 فی صد (630 میگاواٹ) ہے۔ گوادر پرو کے مطابق چین پہلے ہی پاکستان میں گرین انرجی میں سب سے بڑا سرمایہ کار ہے۔ اس وقت پاکستان میں سولر پی وی پلانٹس میں 144 ملین ڈالر کی غیر ملکی سرمایہ کاری میں سے، 125 ملین ڈالر چین سے ہیں، جو کل کا تقریباً 87 فیصد بنتا ہے۔ گوادر پرو کے مطابق چینی سرمایہ کاری کی بدولت چند ہفتے قبل وفاقی وزیر بجلی خرم دستگیر خان نے سندھ کے ضلع ٹھٹھہ کے جھمپیر میں ہوا

سے توانائی کے دو نئے منصوبوں کا افتتاح کیا، جس کا مقصد مقامی توانائی کے ذرائع سے سستی اور صاف ستھری بجلی پیدا کرنا ہے۔ اس خطے میں ونڈ منصوبے حالیہ برسوں میں چینی سرمایہ کاری حاصل کرنے والے قابل تجدید توانائی کے متعدد منصوبوں میں سے ایک ہیں۔ کراچی سے تقریباً 90 کلومیٹر کے فاصلے پر، جھمپیر ملک کے سب سے بڑے ‘ونڈ کوریڈور’ کا مرکز ہے،

جو سبز وسائل سے 11000 میگاواٹ (میگاواٹ) توانائی پیدا کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ ونڈ انرجی کے فروغ میں ایک اور اہم پیشرفت اس وقت ہوئی جب بیجنگ میں قائم ملٹی نیشنل ونڈ ٹربائن بنانے والی کمپنی، گولڈ وِنڈ کارپوریشن نے پاکستان میں اپنی نوعیت کی پہلی سولیوشن فیکٹری کا آغاز کیا۔

سولیوشن فیکٹری کا مقصد پاکستانی ونڈ پاور پلانٹس کے لیے مقامی حل تیار کرنا ہے۔ گوادر پرو کے مطابق وزیر اعظم شہباز شریف نے حال ہی میں درآمدی ایندھن پر انحصار کم کرنے کے لیے ملک بھر میں 10000 میگاواٹ شمسی توانائی کی فوری تنصیب کا اعلان کیا۔ ماہرین کا خیال ہے کہ چین شمسی توانائی کے منصوبوں کی تنصیب میں بڑا کردار ادا کرے گا کیونکہ اس سے قبل اس نے

ایک میگا کواڈ اعظم سولر پارک بھی نصب کیا ہے۔ گوادر پرو کے مطابق چین سب سے سستا سولر میٹریل بھی بنا رہا ہے، اس لیے گھریلو اور تجارتی صارفین پاکستان میں چینی سولر کٹس کو ترجیح دیتے ہیں۔ لونگی سولر کے ریجنل سیلز مینیجر، لی ڑاؤپیننگ نے کہا کہ ہم رہائشیوں کے ساتھ ساتھ صنعتی اور تجارتی عمارتوں کے لیے چھتوں پر مزید سولر پینل فراہم کرکے پاکستان میں تقسیم شدہ شمسی توانائی پر

توجہ مرکوز کریں گے۔ کمپنی اعلی درجہ حرارت کے درمیان شمسی آلات کے آپریشن اور دیکھ بھال کو بھی اپنی مرضی کے مطابق بنا رہی ہے، جس نے اس موسم گرما میں پاکستان کو متاثر کیا، تاکہ اپنے سامان کو بڑھتی ہوئی موسمیاتی تبدیلیوں کے مطابق ڈھال سکیں۔ گوادر پرو کے مطابق شدید موسمی حالات کی پیشن گوئی اور الرٹ کے بعد جب سیلاب آتا ہے تو شمسی آلات کی حفاظت کے لیے اقدامات کیے جائیں گے

۔ 2022 کے وسط کے دوران پاکستان کے پاور ڈویڑن نے فیصلہ کیا کہ گوادر میں کوئلے پر مبنی 300 میگاواٹ کی درآمدی بجلی کی سہولت کو ترک کر دیا جائے گا، اس کی جگہ ایک سولر پراجیکٹ لگایا جائے گا۔گوادر پرو کے مطابق چین گزشتہ کئی سالوں سے سی پیک اور پاکستا ن کے ہائیڈرو پاور سیکٹر میں بھی سرمایہ کاری کر رہا ہے، پاکستانی میڈیا کی ایک حالیہ رپورٹ کے مطابق چین اسٹیل اسٹرا کا استعمال کرتے ہوئے

تربیلا ڈیم کی صفائی میں پاکستان کی مدد کرنے کے لیے تیار ہے۔ چینی کمپنیاں 120 میٹر کی اسٹیل راڈ کا استعمال کرتے ہوئے ملک کے سب سے بڑے ذخائر سے ڈیم کی صفائی کریں گی۔ پاکستان کی واٹر اینڈ پاور ڈویلپمنٹ اتھارٹی کے مطابق تربیلا ڈیم دنیا کے سب سے بڑے زمینی اور چٹانوں سے بھرے ذخائر میں سے ایک ہے اور آبی وسائل کے فروغ کا سب سے بڑا منصوبہ ہے۔

گوادر پرو کے مطابق رواں سال بھی ایک پیش رفت ہدف کیونکہ میگا سی پیک ہائیڈرو پاور پراجیکٹس نے اپنا کام شروع کر دیا ہے۔ سی پیک کے تحت چائنا تھری گورجز کارپوریشن کا پہلا ہائیڈرو الیکٹرک جوائنٹ وینچر، کروٹ ہائیڈرو پاور پراجیکٹ، نے جون 2022 کے دوران کمرشل آپریشن شروع کیا،یہ منصوبہ، جس کی کل نصب صلاحیت 720 میگا واٹ ہے اور دریائے جہلم پر واقع ہے،

یہ پہلا اہم ہائیڈرو پاور سرمایہ کاری کا منصوبہ ہے۔ سی پیک ہائیڈرو الیکٹرک پاور پلانٹ، جس کی تعمیر اپریل 2015 میں شروع ہوئی، توقع ہے کہ سالانہ تقریباً 3.2 بلین کلو واٹ گھنٹے صاف بجلی پیدا کریگا اور پاکستان کو اس کی تقریباً 5 ملین آبادی کی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے قابل اعتماد اور سستی توانائی فراہم کریگا۔ گوادر پرو کے مطابق سی پیک سے

متعلقہ دیگر ہائیڈرو پاور پراجیکٹس میں کوہالہ ہائیڈرو پاور پراجیکٹ، سکی کناری ہائیڈرو پاور پراجیکٹ، اور آزاد پتن ہائیڈرو پاور پراجیکٹ شامل ہیں۔ مزید برآں، دیامر بھاشا، نیلم جہلم، مہمند اور داسو ڈیم بھی پاکستان میں صاف اور سستی توانائی فراہم کرنے کے چینی عزم میں حصہ ڈال رہے ہیں۔ گوادر پرو کے مطابق چین لاہور میں کچرے سے توانائی کی سہولت کے قیام میں بھی پاکستان کی مدد کر رہا ہے

جب تحقیق میں یہ بات سامنے آئی کہ قوم جدید ٹیکنالوجی کو بروئے کار لا کر کچرے سے بجلی پیدا کرنے کی بے پناہ صلاحیت رکھتی ہے۔ مجوزہ پلانٹ میں 40 میگاواٹ کی نصب صلاحیت کی توقع ہے۔ اس میں دو ٹربائن جنریٹر ہوں گے جن کی مشترکہ پیداوار 20 میگا واٹ ہوگی۔ گوادر پرو کے مطابق پاکستانی وزیر اعظم شہباز شریف کے حالیہ دورہ چین کے دوران، چین نے پاکستان کی حکومت کی جانب سے

قابل تجدید توانائی کے منصوبوں کو بھرپور طریقے سے تیار کرنے کی کوششوں کو سراہا جن میں شمسی توانائی کے منصوبے شامل ہیں جو توانائی کے شعبے کی سبز، کم کاربن اور ماحولیاتی ترقی سے ہم آہنگ ہیں، اور اس اس کوشش میں چینی کمپنیوں کی شرکت کی حوصلہ افزائی کی۔ گوادر پرو کے مطابق وزیراعظم شہباز شریف کے دورہ بیجنگ کے دوران اہم چینی کمپنیوں نے پاکستان کے سولر،

واٹر اور انفراسٹرکچر کے دیگر منصوبوں میں سرمایہ کاری میں گہری دلچسپی ظاہر کی ہے۔ وزیراعظم نے چینی کارپوریٹ سربراہان کو دعوت دی کہ وہ پاکستان آئیں اور حکومت کے جامع سولر پاور پروگرام میں سرمایہ ڈالیں جس کا مقصد 10000 میگا واٹ بجلی پیدا کرنا ہے۔ گوادر پرو کے مطابق پاکستانی دانشور اور محققین بھی گرین انرجی میں پاک چین تعاون بڑھانے میں اپنا کردار ادا کر رہے ہیں۔

2022 کے وسط میں گرین چائنا پاکستان اکنامک کوریڈور ( سی پیک ) الائنس” کا اعلان پاکستان چائنا انسٹی ٹیوٹ (PCI) اور سسٹین ایبل ڈویلپمنٹ پالیسی انسٹی ٹیوٹ (SDPI) نے کیا۔ یہ اتحاد پاکستان اور بی آر آئی کے اندر اس تبدیلی کی حمایت اور اس میں تیزی لانے کی نیت سے بنایا گیا تھا۔ الائنس کے اراکین میں سرمایہ کار، سول سوسائٹی اور ماحولیاتی ماہرین شامل ہیں۔

گوادر پرو کے مطابق اسی طرح پاکستان کے وزیر توانائی جناب خرم دستگیر بھی پراعتماد ہیں کہ پاکستان کا مستقبل توانائی کا منظر نامہ مقامی قابل تجدید ذرائع بشمول ہائیڈرو، سولر، ونڈ، کوئلہ اور جوہری کے استعمال پر مبنی ہو گا، انہوں نے مزید کہا کہ چین صاف توانائی کی صلاحیت کو استعمال کرنے میں ملک کے لیے سب سے اہم اور قیمتی شراکت دار ہے۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published.